36 بچیوں کا معاملہ صاف ہونے لگا ہے ،میڈیا کے چند افراد نے اسے سنگین بنایا

کراچی سے بازیاب کرائی گئی 36 کمسن بچیوں کا معاملہ صاف ہونے لگا ہے ،شہر کے ایک پولیس اسٹیشن میں من پسند افسر کی تعیناتی کے لیے میڈیا سے تعلق رکھنے والے چند افراد نے اصل حقائق جاننے کے باوجود بچیوں کے اغواءکی خبر نشر کرواکر اسے ایشو بنایا ، پولیس کے اعلیٰ افسران بھی واقعہ سے متعلق مکمل آگہی رکھتے ہیں،دوسری جانب بچیوں کی والدین سے رابطہ نہ ہوسکا اور نہ ہی کسی کے خلاف مقدمہ درج کیا جاسکا ہے جب کہ تمام بچیاں صوبائی حکومت کی تحویل میں ہیں۔پولیس ذرائع کے مطابق لیاقت آباد سی ون ایریا سے بازیاب کرائی گئی 36 بچیوں کا معاملہ صاف ہونے لگا ہے ،میڈیا کے چند افراد نے اسے سنگین بنایا جبکہ وہ اس بات سے واقف تھے کہ یہ معاملہ بچیوں کے اغوا کا نہیں ہے ۔ذرائع نے بتایا کہ کراچی پولیس کے ایک انسپکٹر انظار عالم کو نجی میڈیا گروپ کاایک نمائندہ سپر مارکیٹ پولیس اسٹیشن کا انچارج مقرر کروانا چاہتا تھا ۔انظار عالم اس سے قبل بھی تھانہ سپر مارکیٹ کے انچارج رہ چکے ہیں ۔اس لیے جب سابق تھانیدار کو کسی ذرائع سے یہ اطلاع موصول ہوئی تو اس نے میڈیا کے نمائندے سے ڈسکس کرنے کے بعداسے اغواءقرار دیتے ہوئے میڈیا پر نشر کروادیا تاکہ سپر مارکیٹ پولیس اسٹیشن کے موجودہ انچارج حسن حیدر کو معطل کروایا جاسکے۔تاہم اعلیٰ پولیس حکام جلد ہی اصل حقائق تک پہنچ چکے تھے لیکن اس دوران سیاسی جماعتوں کے نمائندوں نے اسے ایشو بنادیا اور سیاست شروع کردی تھی۔دوسری جانب پولیس نے مدرسے کی معلمہ حمیدہ بی بی اور اس کے خاوند سیف کو حراست میں لے لیا اور بہاولپور سے تعلق رکھنے والی ایک بچی کو ورثا کے حوالے کردیا ہے جبکہ دیگر 35 بچیاں سندھ حکومت کی تحویل میں سندھ ویلفئیر ووکیشنل سینٹر میں قیام پذیر ہیں۔ پولیس کا کہنا ہے کہ بچیاں رکھنے کے حوالے سے تاحال کوئی قابل دست اندازی جرم سامنے نہیں آیااورتاحال کسی کے خلاف کوئی مقدمہ بھی درج نہیں کیا جاسکا۔واضح رہے کہ کراچی کے علاقے لیاقت آباد سی ون ایریا میں بدھ کو پولیس نے علاقہ مکینوں کی شکایت پر ایک گھر پرچھاپہ مارکر 26 کمسن بچیاں برآمد کرلیں تھیں جس کے بعد زیر حراست معلمہ کی نشاندہی پرمزید ایک گھر سے 7 بچیاں برآمد کی گئیں اور پولیس نے رات گئے کورنگی کراسنگ کے قریب ایک مدرسے مزید 3 بچیاں بازیاب کروائی جس کے بعد بازیاب کرائی گئی بچیوں کی مجموعی تعداد 36 ہوگئی۔#کراچی سے بازیاب کرائی گئی 36 کمسن بچیوں

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s