حریت پسند کشمیر رہنما میر واعظ عمر فاروق اور سید علی گیلانی گرفتاربھارتی ظلم و تشدد کے خلاف مظاہرے کے اعلان سے خوف زدہ بھارتی فوج نے حریت پسند رہنماؤں سید علی گیلانی اور میر واعظ عمر فاروق کو گرفتار کر لیا ہےمقبوضہ کشمیر میں برہان وانی کی بھارتی فوج کی بربریت کے ہاتھوں شہادت کے بعد سے 28 روز سے کشمیر میں کشیدگی جاری ہے۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے نوجوان حریت پسند رہنما برہان وانی کی شہادت کے بعد سے کشمیر میں جاری کشیدگی اپنے عروج پر پہنچ گئی ہے جب بھارتی فوج نے کشمیری رہنماؤں کو مظاہرے اور احتجاج سے روکنے کے لیے گرفتار کر لیا ہے، دنیا بھر میں خود کو جمہوریت کا چمپیئن کہلوانے والی بھارتی حکومت مظلوم کشمیریوں کے صدائے احتجاج بلند کرنے کے بنیادی حق سے محروم کرنا چاہتی ہے۔

واضح رہے مقبوضہ کشمیر کے علاقے کلگام میں گزشتہ روز بھارتی مظالم کے ہاتھوں 127 کشمیری زخمی ہو گئے تھے جب کہ پیلٹ گن سے زخمی ہونے والے ایک اور مظلوم کشمیری جام شہادت نوش کر گیا جس کے بعد 27 دنوں میں شہداء کی تعداد 64 تک جا پہنچی ہے تاہم بھارتی بربریت کشمیریوں کے حوصلے پست نہیں کر سکی ہے۔

یاد رہے گزشتہ روز سری نگر میں بھارتی فوج نے دو نہتے اور معصوم کشمیری شہریوں کو پیلٹ گن سے فائر کر کے شہید کردیا، جس کےبعد وادی میں صورتحال کشیدہ ہوگئی ،کرفیو کے باوجود لوگ بڑی تعداد میں شہیدوں کےجنازے میں شریک ہوئے اور بھارت مخالف نعرے لگائے۔

مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی درندگی پر خود بھارتی رہنما اپنی حکومت کی جنگجوانہ پالیسی پر سراپا احتجاج بن گئے ہیں،مقبوضہ کشمیر میں بی جے پی کے رہنما غلام حسن زرگار نے بھارت کی ظالمانہ ہٹ دھرمیوں اور معصوم لوگوں کو قتل کرنے کے خلاف استعفیٰ دے کر حریت تحریک کا حصہ بنے کا اعلان کیا گئے جب کہ اس سے قبل عوامی اتحادی پارٹی اور نیشنل کانفرنس کے رہنما بھی بھارتی کی غاصبانہ پالیسی سے متنفر ہو کر اپنی اپنی پارٹی چھوڑ نے مجبور ہو گئے ہیں۔