غیر شرعی طور پر نکاح کرنیوالی دونوں خواتین کیخلاف قانونی کارروائی کا حکم

لاہور ہائیکورٹ ملتان بینچ کے جسٹس باقر علی نجفی نے جنس تبدیلی کیس میں غیر شرعی طور پر نکاح کرنے والی دونوں خواتین نازیہ اور عائشہ کے خلاف قانونی کاروائی کے احکامات جاری کر دیے۔

تونسہ کی رہائشی نازیہ نے خود کو لڑکا ظاہر کر کے اپنی کلاس فیلو عائشہ سجاد سے 26 اپریل 2016 کو شادی کر لی اور بیانات ملتان میں بشیر احمد بھٹی ایڈووکیٹ کے چیمبر میں ہوئے تاہم گواہان نازیہ کے بھائی، بھابھی تھے۔ لاہور ہائی کورٹ ملتان بینچ کے حکم پر دونوں کو حراست میں لیا گیا اور ان پر خلاف شریعت اقدامات کرنے اور دھوکا دینے کے زیر دفعات 420، 468 اور 471 کے تحت کاروائی کی جا رہی ہے۔ نازیہ کو جوڈیشل ریمانڈ کے لئے آج تونسہ کے سول جج اطہر حسین کی عدالت میں پیش کیا جائے گا جبکہ عائشہ کو عدالت کے حکم پر 21 دسمبر کو دوبارہ لاہور ہائی کورٹ ملتان بینچ کے فاضل جج کے پاس پیش کیا جائے گا۔ تونسہ کی رہائشی عائشہ سجاد نے لاہور ہائی کورٹ ملتان بینچ میں پٹیشن دائر کی تھی کہ اس کی کلاس فیلو نازیہ کی جنس تبدیل ہونے پر اس سے شادی کر لی ہے جبکہ اس کے والدین انہیں پولیس کے زریعے تنگ کر رہے ہیں اس پٹیشن کی سماعت کے دوران نازیہ کی میڈیکل رپورٹ میں جنس لڑکی ثابت ہوئی جس پر کاروائی کا سلسلہ شروع کر دیا گیا ہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s