مکہ مکرمہ میں کرین حادثے سے متعلق چونکا دینے والے انکشافات

%d9%85%da%a9%db%81-%d9%85%da%a9%d8%b1%d9%85%db%81-%d9%85%db%8c%da%ba-%da%a9%d8%b1%db%8c%d9%86-%d8%ad%d8%a7%d8%af%d8%ab%db%92-%d8%b3%db%92-%d9%85%d8%aa%d8%b9%d9%84%d9%82-%da%86%d9%88%d9%86%da%a9%d8%a7مکہ مکرمہ میں گزشتہ سال کرین حادثے کے نتیجے میں شہادتوں کے بعد تشکیل دی گئی تحقیقاتی رپورٹ میں چونکا دینے والے انکشافات کئے گئے ہیں۔
العربیہ ڈاٹ نیٹ کی رپورٹ کے مطابق مکہ کی ایک فوجداری عدالت میں کرین حادثے کی پیش کردہ رپورٹ میں سنگین بے ضابطگیوں کا سراغ لگایا گیا ہے جب کہ رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ حادثے کے مقام پر کام کرنے والا ایک انجینئر اور دیگر لوگ کرین چلانے کے رہنما کتابچے کے بارے میں کچھ نہیں جانتے تھے جب کہ ان میں سے بعض ورکرز نے تو رہنمائی کرنے والے کتابچے کو تو کبھی دیکھا تک نہیں تھا۔ سیفٹی ماہرین کے مطابق حادثے کی جگہ پر کام کے دوران عوام الناس کے تحفظ اور کرین چلانے کے لئے اختیار کردہ اقدامات بھی ناکامی تھے۔
تحقیقاتی بیورو کا اپنی رپورٹ میں کہنا تھا کہ کرین کو بنانے والی کمپنی کی جانب سے اسے چلانے کے لیے وضع کردہ ہدایاتی کتابچے میں درج ہدایات کو یکسر نظر انداز کیا گیا اور اس کے برعکس کرین کو نصب کیا گیا تھا جس کی وجہ سے 80 کلومیٹر کی رفتار سے چلنے والی تیز آندھی میں کرین اپنا بوجھ برداشت نہ کر سکی اور مسجد الحرام کے ایک حصے میں عبادت میں مصروف لوگوں پر گر پڑی تھی۔
واضح رہے کہ مسجد الحرام میں گزشتہ سال ستمبر میں 1300 ٹن وزنی کرین عبادت میں مصروف افراد پر گر گئی تھی جس کے نتیجے میں 111 افراد شہید جب کہ سیکڑوں زخمی ہوگئے تھے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s