سندھ میں خطرناک قیدیوں کے لیے خصوصی جیل بنانے کی منظوری

محکمہ داخلہ سندھ کا کہنا ہے کہ صوبے کی مختلف جیلوں میں 400 سےز اید انتہائی خطرناک مجرم قید ہیں جن کے لیے ٹھٹہ میں خصوصی جیل بنائی جائے گی۔ 

پارلیمنٹ ہاؤس اسلام آباد میں سینیٹ کی فنکشنل کمیٹی برائے انسانی حقوق کا اجلاس ہوا جس میں محکمہ داخلہ سندھ کے حکام نے صوبے میں جیلوں کی سیکیورٹی اور بنیادی سہولیات سے متعلق امور پر غور کیا گیا۔

اجلاس کے دوران وزارت داخلہ سندھ کے حکام کی جانب سے بتایا گیا کہ کراچی سینٹرل جیل میں ڈیڑھ ہزار قیدیوں کی گنجائش ہے لیکن اس وقت وہاں ساڑھے 4 ہزار سے زائد قیدی ہیں۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ صوبے بھر کی جیلوں میں غیر قانونی سرگرمیوں پر نظر رکھنےکے لیے سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب رواں برس مکمل کرلی جائے گی۔

محکمہ داخلہ سندھ کے حکام نے کہا کہ سندھ کی مختلف جیلوں میں 400 سے زائد انتہائی خطرناک قیدی موجود ہیں، یہ قیدی دہشت گردی کی وارداتوں اور دیگر مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث ہیں، سندھ حکومت نے ان مجرموں کے لیے خصوصی جیل تعمیر کی جائے گی، اس کے لیے ٹھٹہ میں 300 ایکڑ زمین کی نشاندہی بھی کی جاچکی ہے۔ اس کی تعمیر کو سالانہ ترقیاتی منصوبوں میں شامل کیا جائے گا۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s